زبان کا انتخاب
همارے ساتھ رهیں...
مقالوں کی ترتیب جدیدترین مقالات اتفاقی مقالات زیادہ دیکھے جانے والے مقالیں
■ سیدعادل علوی (27)
■ اداریہ (14)
■ حضرت امام خمینی(رہ) (7)
■ انوار قدسیہ (14)
■ مصطفی علی فخری
■ سوالات اورجوابات (5)
■ ذاکرحسین ثاقب ڈوروی (5)
■ ھیئت التحریر (14)
■ سید شہوار نقوی (3)
■ اصغر اعجاز قائمی (1)
■ سیدجمال عباس نقوی (1)
■ سیدسجاد حسین رضوی (2)
■ سیدحسن عباس فطرت (2)
■ میر انیس (1)
■ سیدسجاد ناصر سعید عبقاتی (2)
■ سیداطہرحسین رضوی (1)
■ سیدمبین حیدر رضوی (1)
■ معجز جلالپوری (2)
■ سیدمہدی حسن کاظمی (1)
■ ابو جعفر نقوی (1)
■ سرکارمحمد۔قم (1)
■ اقبال حیدرحیدری (1)
■ سیدمجتبیٰ قاسم نقوی بجنوری (1)
■ سید نجیب الحسن زیدی (1)
■ علامہ جوادی کلیم الہ آبادی (2)
■ سید کوثرمجتبیٰ نقوی (2)
■ ذیشان حیدر (2)
■ علامہ علی نقی النقوی (1)
■ ڈاکٹرسیدسلمان علی رضوی (1)
■ سید گلزار حیدر رضوی (1)
■ سیدمحمدمقتدی رضوی چھولسی (1)
■ یاوری سرسوی (1)
■ فدا حسین عابدی (3)
■ غلام عباس رئیسی (1)
■ محمد یعقوب بشوی (1)
■ سید ریاض حسین اختر (1)
■ اختر حسین نسیم (1)
■ محمدی ری شہری (1)
■ مرتضیٰ حسین مطہری (3)
■ فدا علی حلیمی (2)
■ نثارحسین عاملی برسیلی (1)
■ آیت اللہ محمد مہدی آصفی (3)
■ محمد سجاد شاکری (3)
■ استاد محمد محمدی اشتہاردی (1)
■ پروفیسرمحمدعثمان صالح (1)
■ شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہرالقادری (1)
■ شیخ ناصر مکارم شیرازی (1)
■ جواہرعلی اینگوتی (1)
■ سید توقیر عباس کاظمی (3)
■ اشرف حسین (1)
■ محمدعادل (2)
■ محمد عباس جعفری (1)
■ فدا حسین حلیمی (1)
■ سکندر علی بہشتی (1)
■ خادم حسین جاوید (1)
■ محمد عباس ہاشمی (1)
■ علی سردار (1)
■ محمد علی جوہری (2)
■ نثار حسین یزدانی (1)
■ سید محمود کاظمی (1)
■ محمدکاظم روحانی (1)
■ غلام محمدمحمدی (1)
■ محمدعلی صابری (2)
■ عرفان حیدر (1)
■ غلام مہدی حکیمی (1)
■ منظورحسین برسیلی (1)
■ ملک جرار عباس یزدانی (2)
■ عظمت علی (1)
■ اکبر حسین مخلصی (1)

جدیدترین مقالات

اتفاقی مقالات

زیادہ دیکھے جانے والے مقالیں

انڈونیشیا میں عزاداری کی تاریخ اور رسومات۔ مجلہ عشاق اہل بیت 12و 13۔ربیع الثانی 1436ھ

انڈونیشیا   میں عزاداری  کی تاریخ  اور رسومات  

تحقیق :  شمش العارف --------------ترجمہ  : محمد علی جوہری

کل یوم عاشوراء و کل ارض کربلاء کی تفسیر انڈونیشیا  جیسے  بڑے اسلامی  ملک میں عزاداری    سید الشہداءکے  قیام   کی  صورت  میں کئی صدیوں سے   دیکھنے  کو  ملتی ہے  ،گرچہ  مکان   کے  اعتبار سے    کربلا  کی سرزمین  اور  انڈونیشیا  کے  ما بین  دس  ہزار کیلو  میٹر  سے  زیادہ کا   فاصلہ پایا جاتا  ہے  اور  زمان  کے  اعتبار سے    14 صدیاں گزر  چکی  ہیں  لیکن اسکے  باوجود کربلا   میں امام  عالی  مقام   اور  انکے  اصحاب  باوفا  کے ذریعے  قائم  کئے گئے انسانی  اقدار  کی  روشنی  انڈونیشیا   کے  مختلف   علاقوں میں   آج بھی دکھائی  ہوئی  دیتی    ہے  ۔

انڈونیشیا میں  مراسم  عزاداری  کا  سلسلہ  سترویں  صدی  کے وسط   سے آغاز ہوا  جو  تابوت  (Tabot) یا «تابوئیک» (Taboik) کے نام  سے مشہور ہے  اور یہ  کلمہ عربی  زبان کے تابوت سے ماخوذ ہے   جولکڑی  کے صندوق  پر اطلاق  کیا  جاتا ہے ۔

بنکولو (Bengkulu)کے علاقے میں تابوت کی شکل میں عزاداری کا  آغاز شیخ برهان الدین - جو سنگولو (Senggolo) کے امام کے  نام  سے   جانے  جاتے  ہیں - نے  1685 میلادی میں کیا  تھا ۔ اگرچہ  بعض مورخین  کی نظر  میں    محکم  تاریخی شواہد کے نہ ہونے  کی وجہ سے عزاداری کے آغاز  کے  حوالے سے  کسی تاریخ  کا  معین  کرنا   مشکل امر ہے  لیکن قرائن    سے    ایسا  لگتا   ہے   کہ  تابوت کی صورت  میں  عزاداری  کا یہ سلسلہ  وہاں کے لوگوں نے ان شیعہ  مومنین  کی  عزاداری  سے متاثرہوکرکیا   تھا جو«مارلبورو» (Marlboro) قلعہ   کی  تعمیر   کیلئے   بنگلہ دیش اور جنوبی ہندوستان سے  انگلینڈکی حکومت  کے ذریعے  وہاں لائے   گئے  تھے  اور   یہ  شیعہ  مذہب  کے ماننے والے  تھے ۔    

عزاداری کا یہ  سلسلہ رفتہ رفتہ اس علاقے کی ثقافت سےہم  آہنگ ہونے کے  بعد   وہاں کے خاص  رسومات  میں شمار  ہونے لگا   اور بتدریج   اسکا دائرہ جزیره سوماترا (Sumatera)  کے دوسرے  علاقے  جیسے پائینان (Painan)، پادانگ (Padang)، پاریامان (Pariaman)، مانینجاو (Maninjau)، پیدی (Pidi)، بندا آچه (Banda Aceh)، مولابوه (Maulebouh)، و سینکیل (Singkil) تک  پھیلتا گیا  لیکن  وقت  گزرنے کے ساتھ وہاں کے بعض علاقوں  سے عزادری   کا   یہ  سلسلہ  کسی  حد تک کم  ہوگیا  ہے لیکن  بنکولو(Bengkulu)اور پاریامان (Pariaman) میں بڑے اہتمام  سے  منایا  جاتا ہے ۔

1980 کے عشرے   کے   بعد انڈونیشیا میں عزاداری   امام  حسین  علیہ السلام نے  ایک   نیا  رخ   اختیار  کیا  ہے   جو  گزشتہ  ادوار  کی  عزاداری  سے  مختلف  ہے  عصر  حاضر  میں  عزاداری  کا  دائرہ    کافی  وسیع   ہوچکا ہے   اور  اب  مساجد  اور  امام بارگاہوں کے  علاوہ   لوگوں کے  گھروں   میں  بھی   عزاداری کا سلسلہ شروع  ہو چکا ہے ۔ انڈونیشیا کے  لوگ  ماہ  محرم کے  پہلے  عشرے میں عزاداری سید  الشہدا  کو  خاص  اہتمام  کے  ساتھ  انجام  دیتے  ہیں   عزاداری  کا  یہ  سلسلہ   دہم  محرم  بروز  عاشورا   اپنے  عروج   کو  پہنچتا ہے   ۔  

 انڈونیشیا  میں مکتب  اہلبیت  علیہم  السلام کے پیروکار، شروع   شروع  میں  تابوت کی صورت  میں عزاداری  کو ایک  خاص طریقے  سے کربلا کے  شہدا ء کی   یاد  کو  زندہ رکھنے  کے غرض سے مناتے  تھے  لیکن  وقت  گزرنے کے  ساتھ وہاں کے  لوگوں کا  رہن  سہن  بھی کافی  حد  تک   عزاداری  کے عمل  میں موثر  ثابت ہوا  ہے   اسی لئے  بنکولو(Bengkulu) کے علاقے میں عزاداری کیلئے سترہ تابوت کا اہتمام کیا جاتا ہے جو  سترہ  خاندانوں  کے  اس  عمل  کی  نشاندہی  کرتا  ہے     جن کے   توسط سے  پہلی  بار  عزاداری کا  یہ  عمل  انجام پایا  تھا ۔

تابوت کی صورت  میں عزاداری کا عمل  دو   پہلو  رکھتا ہے   ۔

1-       تشریفاتی  پہلو  

تابوت  کے تشریفاتی پہلو   کے پیش  نظر   تابوت  کی صورت  میں عزاداری کا عمل  کچھ خاص شرایط کے ساتھ فقط انہیں لوگوں کے  ذریعے  انجام پاتا ہے   جن  کا  خاندانی سلسلہ  تابوت کے آغازکرنے والے کسی ایک  خاندان  سے ملتا ہو ۔

2-     عام پہلو

تابوت  کے عام  پہلو  میں ضروری نہیں  کہ کوئی  خاص   فرد   اس میں   شامل  ہو   بلکہ   اس  عمل  کو  ہر  کوئی انجام  دے سکتا  ہے  ۔    

اس  مراسم  کے  آغاز سے   چند   دن  پہلے ایک  عمارت  کی تعمیر مربع  شکل    میں   کی جاتی  ہے  جسکے  اندر  قبروں کے  نشانات  پایے   جاتے  ہیں   اور  اس  عمارت  کا نام  درگاہ (Daraga) ہے   جہاں  پر  عزاداری  کے  وسائل  اور  اسباب رکھے  جاتے   ہیں ۔ 

اس  عزاداری  کے  اپنے   خاص رسومات  ہیں  جو  عام  طور  پر لوگ  محرم   الحرام کے  آغاز سے  ہی   انجام   دینے کی کوشش کرتے ہیں  ۔

1-       رسم  خاکبرداری

رسم  خاکبرداری بنکولو(Bengkulu) کے علاقے  میں  یکم  محرم  کو نماز  عشاء کے  بعد  تقریبا  رات   8 بجے  انجام  پاتی ہے  اور  یہ  کام    ایسے شخص کے  ذمے لگایا جاتاہے   جو سفید لباس  میں  ملبوس  ہو   اور  یہ   امام  عالی  مقام    کی صداقت  اور  پاکیزگی نفس کی  علامت سمجھا جاتا  ہے   اور  اس خاک  کو امام حسین   علیہ السلام  کے  حرم  پاک (خاک شفاء)  کے  شبیہ  کے  طور  پر  درگاہ (Daraga) میں رکھا جاتا ہے ۔

2-     دودوک پِنجه (Duduk Penja)

رسم دودوک پِنجه (Duduk Penja) چار اور پانچ  محر الحرام کو انجام پاتی ہے ؛ عام طور پرپنجہ کی ساخت وساز  میں  تانبا یا چاندی کو استعمال کیا جاتا  ہے اور وہاں کی مقامی زبان میں «جَری-جَری» (Jari-jari) کہا جاتاہے اور ہرتابوت کے ہمراہ ایک  پنجہ ضرور ہوتاہے ۔

 وہاں کے لوگوں کے مطابق پنجہ ایک  مقدس  وسیلہ  ہے    جسکی حفاظت ہرحال میں ضروری ہے  اور سال میں ایک  مرتبہ اسے  گلاب اور  لیمو کے  پانی  سے  دھویا جاتا ہے  اور  اس  عمل کو وہاں  کے  لوگ اپنی  زبان میں  «دودوک پِنجه»(Duduk Penja) کے نام  سے  یاد  کرتے  ہیں ۔

رسم دودوک پِنجه (Duduk Penja) تابوت کے بانی خاندانوں کے سردار کے گھر مقامی  ٹائم کے  مطابق  شام   چار بجے منایا جاتا ہے  اورخصوصا   پانچ  محر الحرام   کی شام اس  رسم کو   بڑے  اہتمام  کے  ساتھ انجام دیا جاتا ہے   اور  اسکی   ابتدا  دعا  سے  ہوتی  ہے  دعا  کے  بعد  گلاب یالیمو کے  پانی  سے  پنجے   دھونے   کا  عمل  باقاعدہ   شروع ہوتا ہے   اس رسم کی  تکمیل  کے لئے  کھانے  پینے کی اشیا ء  جیسے امپینگ (Emping) ، شربت (Serobat) ، خالص  دودھ ، آب  گلاب ،لیمو  ، کیلا  اور  گنا  وغیرہ   کا  موجود  ہونا   ضروری سمجھا جاتا ہے۔  

3-کیلے  کے  تنے کا  کاٹا جانا

یہ  رسم  5 محرم  الحرام  کو   انجام  دی جاتی   ہے   اس  عمل  کو امام عالی  مقام    کی تلوار کی کاٹ کے مظہر کے طور پر   پہچانا جاتا ہے  کہ گویا امام عالی  مقام    دشمنان   اهل بیت علیہم السلام سے نبرد  آزما  ہونے کیلئے آمادہ  ہورہے  ہوں ، اس عمل کا انجام  دینے  والا شخص جنگی لباس میں ملبوس ہوتا ہے  اور ایک  ہی  وار میں کیلے  کے  تنے کو کاٹ دیتا ہے  ۔

3-   ساتھ محرم کو ماتم اور سینہ  زنی

ماتم اور سینہ  زنی کی صورت  میں  عزاداری  امام مظلوم  علیہ السلام   7 محرم کو تمام  عزاداران نماز ظہر  کی  ادائیگی  کے  بعد  اپنے  ساتھ  پِنجه، عمامه، شمشیر وغیرہ لئے ہوے درگاہ (Daraga) کے اطراف  میں صف بستہ ہوکر گریہ  و زاری کے ساتھ انجام  دیتے  ہیں۔ اس شکل میں عزاداری کرنا امام عالی  مقام  کی مظلومانہ شہادت  پرمغموم ہونے کی  علامت  سمجھی جاتی ہے ۔

4-    کارناوال پِنجه  (کاروان  پنجہ )

 کارناوال پِنجه کی صورت میں عزاداری آٹھ محرم الحرام  کی شب تقریبا  شام  7بجے  سے  رات 9 بجے  تک   علاقہ  بنکولو(Bengkulu)کی تمام شاہراہوں میں انجام پاتی ہے جس میں  عزاداران  امام مظلوم  تابوت  کے  اندر   پنجوں کو   رکھ کرجلوس  عزا   کی صورت  میں  عزاداری   میں   مصروف  ہوتے  ہیں ۔  جلوس  کی  صورت میں  اسطرح   کی عزاداری  جہاں  امام  مظلوم  کی  کٹی  ہوی   انگلیوں کی عکاس  ہے   وہیں ظالم  اور  ستمگر  حاکم  کے سفاکانہ   حرکت  کی بھی  نشاندہی  کرتی ہے ۔   

5-    کارناوال سِرابَن (Seroban)

شب  نہم محرم الحرام  شام 5 بجے  سے رات 9 بجے  تک عزاداران  امام مظلوم  علیہ السلام پنجوں کے علاوہ  سفید  عماموں  کو  چھوٹے  سے  تابوت  میں رکھ   کر پنجوں کے ساتھ  گماتے  ہیں اور  یہ  تابوت   سبز  اور  سفید  رنگ  کے  جھنڈوں سے  مزین   ہوتے  ہیں   ان جھنڈوں میں  امام  حسن  اور  امام حسین  علیہما السلام  کے نام ہاے  مبارک  تحریر کیے  جاتے  ہیں  اسطرح عزاداری  کرنے کو  کارناوال سِرابَن (Seroban) کے نام  سے  یاد  کیا  جاتاہے  جو  کربلاے  معلی  میں  امام  حسین  علیہ السلام کے کٹے ہوے  سر مبارک   کی  عکاسی   کرتی ہے ۔

6-      رسم سوگ اور غم 

نہم محرم الحرام   کے دن  سوگ اور غم کے  نام  سے  عزاداری   امام حسین  علیہ السلام کو  ایک  نیا  رخ  دیا  جاتا ہے   اور  صبح 7 بجے  سے  شام  4 بجے  تک یہ  سلسلہ  برقرار  رہتا ہے  ،سوگوار  فضا کے  باعث اس  پوری مدت میں  کسی  قسم کا کوئی  کام  انجام  نہیں پاتا   یہاں تک  کہ  تابوت سے   متعلق   رسم  سوزخوانی  کو بھی   انجام  نہیں  دیا  جاتا ۔

7-   رسم «هایَک تابوئیک» (Hoyak Taboik)

دہم محرم روز  عاشورا   کے دن «پاسار» (Pasar) تابوئیک- تابوت -اور«سوبارنگ» (Subarang) تابوئیک - تابوت -کو  « حقیقت جنگ کربلا  » کے  عنوان  سے   لوگوں کیلئے نمایش  کے  طور  پیش  کیا  جاتا  ہے اور  یہ  سلسلہ   غروب آفتاب تک   جاری  رہتا  ہے    اور  غروب آفتاب کے  بعد  دونوں تابوئیک - تابوت -کو ساحل سمندر میں لیجاکر  سمندر  کے  حوالے  کیا جاتا ہے ۔

8-    تابوئیک –تابوت- کا دریا کے سپرد  کرنا

تابوئیک – تابوت- کا  دریا کے  سپرد  کرنا  مراسم  عزاداری  کا آخری  مرحلہ  ہے   جو  دس  محرم   بروز  عاشورا غروب  آفتاب کے   وقت   انجام  دیا  جاتا ہے ۔

صبح 9 بجے  تمام  تابوتوں کو   استقلال  اسکوائر  میں   یکجا کرنے  کے  بعد   تقریبا  11:00 بجے   دن  کو   ایک   کاروان کی  شکل  دیکر پادانگ جاتی (Padang Jati) نامی  علاقے  کی  مشہور  قبرستان   صحرائے  کربلا  کی جانب   روانہ   کیا  جاتا  ہے اور اس  کارواں  کی   یہ  آخری   منزل  ہے اور  جیسا کہ  پہلے  اشارہ  ہوچکا ہے کہ  اسی  قبرستان  میں سنگولو  کےامام شیخ برهان الدین بھی   مدفون ہیں جو  تابوت   کی  صورت  میں  عزاداری   کے بانی  سمجھے  جاتے  ہیں ۔

دس  محرم   بروز  عاشورا ٹھیک شام  6 بجے   لوگوں  کی  ایک   کثیر   تعداد  کی  معیت   میں دو  گروپوں  ناگاری‌پاسا (Anak Nagaripasa) اور سوبارانگ (Subarang)کے  توسط سے   تمام  تابوتوں   کو  دریا کے  سپرد  کیا  جاتا ہے  ۔     

9-     مجالس عزا  منانے   کا انداز 

مجالس  عزاء  کا  آغاز  تلاوت قرآن  کریم سے   ہوتا  ہے    تلاوت  کلام  پاک   کے  بعد   اساتذہ  کرام  اور  علماے عظام  اپنی  تقریروں اور  خطابات  میں   انسانی  اقدار کے علاوہ محبت، شجاعت، وفاداری اور  ایثار جیسے مختلف موضوعات   پر روشنی ڈالتے  ہیں۔ مقررین اپنی  تقریر وں کو حضرت عباس علمدار،حضرت علی اکبر ،حضرت علی اصغر، حضرت زینب اوراصحاب  باوفا  کے  مصائب کے  ساتھ انجام تک  پہنچاتے  ہیں ،مجالس  عزا    کا  اختتام  ماتم  اور  سینہ  زنی  پر  ہوتا  ہے  ۔  

انڈونیشیا  میں قومی سطح پر مراسم  عاشورا  دس  محرم  الحرام کو  منایا جاتا ہے  جس میں  ہزاروں  محبان اهل بیت علیہم السلام کے  علاوہ بہت   سے  اہل سنت  حضرات  بھی   مجلس میں شریک ہوتے ہیں   ، عام  طور  ماتمی حضرات    سیاہ  لباس   پہن  کر   عاشورا کے  جلوس  میں   شرکت کرتے   ہیں ، امام  عالی مقام کی   مظلومانہ شہادت    کے موقع  پر سیاہ   رنگ   کالباس   پہننا    اپنے   غم   واندوہ  کے  اظہار  کی   علامت  سمجھا  جاتاہے ۔

یوم عاشورا عزاداری  کا یہ سلسلہ   اپنے  عروج    کو  اس  وقت  پہنچتا  ہے  کہ   جب   کوئی   خطیب مجلس  عزا  سے  خطاب  کرتے   ہوے  کربلا  کے  حماسہ آفرین  پہلو  کی  تشریح  کے  ساتھ   اصحاب   اور  یاران  امام  عالی  مقام   کی   مظلومانہ  شہادت  کی   تصویر  پیش  کرنےکی کوشش  کرتا  ہے  ۔  مصائب  کے  وقت  ہمیشہ  چراغوں کو  خاموش  کیا  جاتا  ہے   تاکہ  تاریک فضا میں کربلا  کے مصائب  کو حاضرین   مجلس   بہترطریقے  سے  اپنے  اندر  احساس کرسکے۔مصائب  کے   بعد   عزاداری  کے تسلسل کو  ماتم    اور  سینہ  زنی   کی  صورت  میں   آگے  بڑھایا جاتا  ہے   اور  آخر  میں زیارت  عاشورا  کی  تلاوت  کے  ساتھ  مجلس  اپنے   اختتام   کو  پہنچتی  ہے  ۔  

سوال بھیجیں